گُذشتہ زمانوں کا
بجانب وکی میڈیا کومنز

عبرانیوں 1: 1-4 "اگلے زمانہ میں خُدا نے باپ دادا سےحِصہ بہ حِصہ اور طرح بہ طرح نبیوں کی معرفت کلام کیا۔ ” (آیت 1)

ہزاروں سال پہلے، آدم اور حوا کے گناہ کرنے کے فوراً بعد، ہو سکتا ہے کہ ہم یسُوع کےدُنیامیں بھیجے جانے کی خواہش کے لیے آزمائے گئے ہوں۔

تاہم، خدا کے مقاصد کے لیے ضروری تھا کہ عہد نامہ قدیم کے صفحات کی طرف رجوع کیا جائے اور یہ محسوس کیا جائے کہ واضح ہدایات اور تنبیہات کے باوجود، انسانیت خدا کے طریقے کے مطابق زندگی نہیں گزار رہی تھی۔

جب یسوع آئے گا، ہم بہتر طور پر سمجھیں گے کہ اسے کیوں آنا پڑا اور وہ کیا کرے گا۔

خُدا اپنے لوگوں کو خبردار کرتا ہے کہ وہ کیا کرے گا اگر وہ بُت پرستی، بداخلاقی، اور ناانصافی سے باز نہیں آتے جو اُن کی زندگی کو اُس کے لوگوں کے طور پر نمایاں کرنے لیے آیا تھا۔

خدا ناقابل یقین حد تک صبر کرنے والا ہے، لیکن آخرکار وہ فیصلہ کرے گا۔ ہم اس بات کو یقینی بناتے ہیں کہ ہر مرتبہ انہیں وہی مِلا جس کی انہیں ضرورت ہے۔

خُدا کا کلام اُن کا جواب دینے کے لیے کامل تھاکہ وہ اُس کی طرف رجوع لائیں۔ لیکن وہ ایسا کرنے میں ناکام رہتے ہیں۔ یسوع کبھی بھی ایک بعد کا خیال نہیں تھا، لیکن وہ "صحیح وقت پر” آیا تھا (گلتیوں 4:4)، لیکن اسی وقت جب روحانی زوال بدترین ہو رہا تھا اور لوگوں کےبابل بھیجے جانے کے بعد بھی ، جلاوطنی کے بعد کی تجدید قلیل المدتی ہے۔

کیا ہم اب بہتر ہیں، اب ہمارے پاس پورا کلام، اور پڑھنے کے لیے یسوع کی زندگی، اور روح القدس موجود ہے؟

خُدا اب بھی ہم سے اُن ہی نبیوں کے ذریعے (جس کی اب یسوع کی روشنی میں تشریح کی گئی ہے) اور مختلف طریقوں سے (خوابوں، رویوں، حالات، اندر کی اُس کی روح، اور اپنے لوگوں کی حکمت کے ذریعے) بات کرتا ہے۔ یہ ایک قیمتی چیز ہے جس سے بات کی جائے۔ ہمارا کام یہ ہے کہ وہ جو کہتا ہے اس پر عمل کریں۔


دُعا سے بنانے کا آیکون

دُعا : اَے خُداوند تیرا شُکر ہو کہ تیرا کلام بیش قیمت خزانہ ہے اور اِس بات کے لئے بھی کہ کلامِ خُدا ہمارے اپنی زبان میں دستیاب ہے اوربآسانی ہماری رسائی میں ہے۔   

عملی اقدام: کوشش کریں اور کسی بھی چیز کا ایک خاص نوٹ بنائیں جسے آپ محسوس کرتے ہیں کہ خدا آپ سے کہہ رہا ہے، تاکہ آپ بھول نہ جائیں۔

غور کرنے کے لئے کتابیں: استشنا 18: 18-15; عاموس 3: 7-1; 1. پطرس 1: 21-13; 2.پطرس 1: 21-16

Micha Jazz is Director of Resources at Waverley Abbey, UK.