بحالی
بجانب سیونٹی فور ایمیجیز

بہت سے ٹیلی ویژن شوز بحالی کے خیال کی نقل کرتے ہیں۔ ایسی چیز کو دیکھ کر خوشی ہوئی جو ایسا لگتا ہے کہ اس کی افادیت ختم ہو گئی ہے اور تمام قدر کھو گئی ہے جو اس کی سابقہ شان میں واپس آ گئی ہے۔

چاہے وہ کباڑ میں پائے جانے والے فرنیچر کا ٹکڑا ہو، اپنے مالک سے الگ ہونے والا پالتو جانور ہو، یا بالغ ہو کر ایک ایسے خاندان کو دریافت کر رہا ہو جسے وہ کبھی نہیں ملا تھا ، انہیں ملے۔

بحالی کسی چیز کو اس کے اصل مالک، مقام یا حالت میں واپس کرنے کا عمل ہے۔ بحالی خدا کی دلپسندیدہ ہے۔

یہ یسوع کی بہت سی تمثیلوں میں دیکھا جا سکتا ہے، جیسے کھوئی ہوئی بھیڑ، کھویا ہوا سکہ، اور کھویا ہوا بیٹا ۔ (لوقا 15)

خُدا اپنے بچوں کے ساتھ اپنے تعلقات کو بحال کرنا چاہتا ہے، یہی وجہ ہے کہ نحمیاہ امیروں کی حرکتوں پر بہت غصہ ہوا۔

لیکن لوگوں کو ان کے رویے کے بارے میں برا محسوس کرنے کے لیے یہ کافی نہیں تھا۔ رقم ادھار لینا کوئی مسئلہ نہیں ہے، لیکن ایسے لوگوں کو قرض فراہم کرنا اور سود وصول کرنا جن کے پاس زندہ رہنے کے لیے خوراک کے لئے بمشکل پیسے ہوتے ہیں تو یہ واضح طور پر موسیٰ کی معرفت دی گئی شریعت کی خلاف ورزی ہے ۔ (خروج22 :25)

اس مختصر حوالے کے بارے میں جو بات دلچسپ ہے وہ یہ ہے کہ نحمیاہ نہ صرف دوسروں پر بلکہ اپنے آپ پر بھی ناراض ہے۔

آیت 10 میں وہ ظاہر کرتا ہے کہ اس نےبھی موسوی شریعت کے خلاف سود وصول کیا۔

وہ نہ صرف دوسروں کے گناہوں پر ماتم کرتا ہے بلکہ اپنے کیے میں اپنے جرم کا اعتراف بھی کرتا ہے۔

کتنی بار ہم نے دوسرے لوگوں کے رویے پر انگلی اٹھائی ہے یہ صرف سمجھنے کے لیےہے کہ ہم بھی اکثر دوسروں کی طرح اُتنے ہی قصوروار ہو تے ہیں؟


دُعا سے بنانے کا آیکون

 دعا:  اَے خُداوند، میَں معافی مانگتا ہوُں جب میں دوسروں پر الزام لگانے میں جلدی اورتوبہ کرنے میں سُستی کرتا ہوں ۔ دوسروں کو اس طرح دیکھنے میں میری مدد فرما جس طرح آپ انہیں دیکھتے ہیں۔  اپنی نجات کی شادمانی مُجھے پھر عنایت کر اور مُستعد روُح سے مُجھے سنبھال ۔ آمین

عملی اقدام: ایک لمحہ نکال کر اپنے دل میں منافقت کی علامات تلاش کریں۔ کیا ایسا وقت آیا ہے جب آپ نے دوسرے لوگوں کے رویے کا فیصلہ کیا لیکن خود کو اتنا ہی قصوروار محسوس کیا؟

 غور کرنے کے لیے کتابیں: خروج 22: 21-27 ; احبار 25: 35 – 38 ; لوقا 15: 11-32 ; 1. تیمیتھیس 5: 1-8

Micha Jazz is Director of Resources at Waverley Abbey, UK.