دیوار
بجانب یوری آرکرس پیپل ایمیجیز

کچھ سال پہلے میں نے لندن میراتھن دوڑی تھی۔ یہ ایک ناقابل یقین دن تھا۔ میں نے مہینوں تک تربیت حاصل کی۔ میں اچھی حالت میں تھا اور ابتدائی لائن پر ہزاروں دوسرے لوگوں میں شامل ہوا۔

مجھے وہ لمحہ یاد ہے جب سب غلط ہونا شروع ہوا۔ ٹاور برج، تقریباً آدھا راستہ کے نشان پر۔ میں اچھا محسوس کر رہا تھا اور سوچا، "یہ بہت اچھا ہے، میں آدھا راستہ طے کر چُکا ہوں۔”

مجھے بس اسے دوبارہ کرنے کی ضرورت ہے۔ دوبارہ! وہ ایک لفظ میرے سرمیں گونج اٹھا اور میری ٹانگیں لرزنے لگیں۔ اس لمحے سے میں لطف سےبرداشت کی طرف بڑھ گیا۔

میں نے اسے گول بنایا، توقع سے زیادہ آہستہ، جیسا کہ میں دیوار سے ٹکرا گیا تھا، لیکن اپنے ارد گرد موجود ہجوم کی حمایت کی بدولت آگے بڑھتا رہا۔

ایسا ہی ایک لمحہ نحمیاہ کی کہانی میں آتا ہے۔ سب کچھ ٹھیک چل رہا ہے، برادری مصروف ہے، دیوار آدھی بنی ہوئی ہے، دشمن کو روک دیا گیا ہے، اور پھر لوگ تھکنے لگتے ہیں۔

ابتدائی جوش ختم ہو جاتا ہے اور وہ شکایت کرنا شروع کر دیتے ہیں جب وہ حقیقی دیوار کو دوبارہ تعمیر کرتے ہوئے "مجازی دیوار” سے ٹکراتے ہیں۔

یہ ہم سب کے ساتھ ہوتا ہے، چاہے ہماری جسمانی یا ذہنی تندرستی کتنی ہی صحت مند ہو۔ ہم ایک نئی عادت بنانا شروع کرنے کے بارے میں پرجوش ہو جاتے ہیں۔

اپنی خوراک، اپنے تعلقات، اپنے مالی انتظام، اپنی دعا ئیہ زندگی یا یہاں تک کہ اپنی ورزش میں تبدیلیاں لانا۔ لیکن پھر تھکاوٹ ختم ہو جاتی ہے اور جوش ختم ہو جاتا ہے۔

بارش ہو رہی ہے، ہمیں بھوک لگی ہے، ہمارا بستر گرم ہے، بہت مشکل ہے۔ ہم ایک دیوار سے ٹکراتے ہیں اور خود سے کہتے ہیں کہ ہم کسی اور دن دوبارہ کوشش کریں گے۔ دیوار کو عبور کرنا مشکل کام ہے اور اس کے لیے دوسروں کا تعاون درکار ہوتا ہے۔


دُعا سے بنانے کا آیکون

 دعا:

 اَے خداوند، میری مدد فرما کہ میں تھکاوٹ کے وقت اپنی طاقت سے تجاوز نہ کروں۔ میری چٹان اور قلعہ بن جہاں مجھے پناہ اور بحالی ملے ۔ آمین

عملی اقدام: کیا کوئی ایسی صورتحال ہے جس میں آپ معمول سے زیادہ تھکاوٹ محسوس کرتے ہیں؟ خُدا کے ساتھ وقت گزاریں اور اُس سے اِس بوجھ کو ہٹانے اور اُس کی جگہ ’’ہلکے جوئے‘‘   کے لئے اُس کی منت کریں۔

 غور کرنے کے لیے کتابیں:

زبور 34: 15-20 ; یسعیاہ 40: 28-31 ; متی 11: 28-30 ; گلتیوں 6: 9-10

Micha Jazz is Director of Resources at Waverley Abbey, UK.