ادا کرتے ہیں
بجانب راپکسل

کیا آپ نے کبھی بائبل پڑھی ہے اور سوچا ہے کہ کہانی کے کون سے حصے آپ کے ساتھ گونجتے ہیں؟ لوگ اکثر خود کو مرکزی کردار کے رُوپ میں دیکھتے ہیں۔

یہ داؤد ہیں، جولیت نہیں، پولُس ہیں، ساؤل نہیں، آستر اور مردکی ہیں، لیکن یقینی طور پر ہامان نہیں، یوسف ہیں لیکن اُس کے بہت سے بھائیوں میں سے کوئی نہیں۔

تاہم حقیقت ایسی نہیں ہے۔ ہم میں سے ہر ایک بادشاہ، وزیر اعظم، سی ای او، پادری یا اسکول کا پرنسپل نہیں ہو سکتا۔

نحمیاہ کی اس کہانی میں، وہ بادشاہ کے خادم، ساقی کے طور پر بے چینی محسوس کرتا ہے۔

اس کردار کے لیے اسے بادشاہ کے سامنے اُسکے پینے سے پہلے شراب چکھنے کی ضرورت تھی یہ دیکھنے کے لئے کہ کہیں شراب زہر آلود تو نہیں۔

یہاں تک کہ اگر نحمیاہ مر گیا، بادشاہ یہ خطرہ مول لینےکے لیے تیار تھا اور محض ایک اور ساقی کو مقرر کرنا ہو گا۔

نحمیاہ صرف ایک خادم نہیں تھا، وہ دستیاب تھا۔ ہم سوچتے ہیں کہ صرف "اہم” لوگ ہی تبدیلی لا سکتے ہیں ۔

کہ ہم میں سے بیشتر بے اختیار ہیں اور ان کے پاس پیش کرنے کے لیے کچھ نہیں ہے۔ ہم صرف یہ کر سکتے ہیں کہ اپنے پیاروں کے ساتھ کھڑے ہوں، ایک کپ پکڑیں اور خدمت کریں۔

ہمیں کہانیوں، فلموں، کتابوں اور آرٹ کے ذریعے مسلسل بتایا جاتا ہے کہ ہمیں فرق کرنے کے لیے خاص ہونا چاہیے۔ لیکن یہ نحمیاہ کی کہانی نہیں ہے۔

وہ ایک ایسا خادم تھا جسے باآسانی تبدیل کیا جاسکتا تھا، جو بادشاہ کے ذہن اور اس کے لوگوں کی رفتار کو بدلنے والا تھا۔

کیا آپ نے کبھی محسوس کیا ہے کہ آپ زندگی میں جو کردار ادا کرتے ہیں اس کی وجہ سے آپ تبدیلی لانے سے قاصر ہیں؟


دُعا سے بنانے کا آیکون

 دعا: اَے خُداوند ، مجھے افسوس ہے جبکہ میں نے فرض کر لیا ہے کہ اپنی فرضی حیثیت کی وجہ سے میرے پاس زندگی میں اپنے آس پاس والوں کو دینے کے لیے کچھ نہیں ہے۔ مجھے ارد گرد کی ضرورت کو دیکھنے اور اپنے روح کی طرف سے نئے سرے سے رہنمائی کرنے میں میری مدد فرما۔ آمین

:عملی اقدام   زندگی میں آپ جو کردار ادا کرتے ہیں اس کے بارے میں سوچیں۔ آپ دوسروں کو یہ کیسے سمجھائیں گے؟ "میں صرف یہ کرتا ہوں” یا "میں صرف یہ کرتا ہوں” ہوسکتا ہے کہ خدا نے آپ کو اِسی کام کے لیے مقرر کیا ہو اور آپ اپنی سوچ سے کہیں زیادہ تبدیلی لا سکتے ہیں۔

غور کرنے کے لیے کتابیں:  یسعیاہ 61: 1-2 ; متی 23: 11-12 ; فلپیوں 2: 5-7 ; 1. پطرس 4:10

Micha Jazz is Director of Resources at Waverley Abbey, UK.