FotoK0T

تب خداوند کا کلام مجھ پر نازل ہوا۔ اُس نے کہا، ”اے اسرائیل کے گھرانے کیا میَں اس کُمہار کی طرح تُم سے سلوُک نہیں کر سکتا ہوُں؟ خُداوند فرماتا ہے دیکھو جِس طرح مِٹی ‘‘ کُمہار کے ہاتھ میں ہے اُسی طرح اَے اِسرائیل کے گھرانے (یرمیاہ18 :5-6) تُم میرے ہاتھ میں ہو۔

ہماری زندگیوں کے لیے خدا کا منصوبہ

یرمیاہ کا تجربہ اس تخلیقی عمل میں ایک حیرت انگیز سفر کی نشاندہی کرتا ہے جس کا خدا نے ہماری زندگیوں کے لیے منصوبہ بنایا ہے۔ خُداوند مسلسل ہمیں ایک ایسے برتن میں ڈھالنے کی کوشش کر رہا ہے جو اُس کے نام کو جلال اور عزت بخشے۔ وہ چاہتا ہے کہ ہم ایسے برتن بنیں جو اس کی عظیم محبت کو کھوئی ہوئی اور مرتی ہوئی انسانیت تک لے جائیں۔

یرمیاہ کی وضاحت میں11:29زندگیوں کے لیے خُدا کے منصوبے کی ہماری نوعیت میں اور حد کو ظاہر کرتی ہے۔ خُداوند فرماتا ہے "کیونکہ میں تُمہارے حق میں اپنے خیالات کو جانتا ہوں یعنی سلامتی کے خیالات ۔ برُائی کے نہیں تاکہ میں تُم کو نیک انجام کی اُمید بخشُوں ۔ ” ہماری زندگیوں کے لیے خُدا کے منصوبے کی تکمیل کا انحصار بڑی حد تک ہماری رضامندی پر ہے کہ وہ ہمیں ایک قابلِ استعمال برتن میں ڈھال سکے۔

خِدمت ناقابل یقین حد تک مشکل ہو سکتی ہے، اور ہمیں کامیابی کے لیے اندرونی طاقت اور کردار کی ضرورت ہے۔ جب ہم خُداوند کو اپنی زندگیوں کو تشکیل دینے کی اجازت دیتے ہیں تو گہرا کردار ظاہر ہوتا ہے۔ یہ تعلیم اور تربیت کے ذریعے علم حاصل کرنے سے مختلف ہے۔ یہ بھی حکمت کے مترادف نہیں ہے۔

درجہ کمال تک پُہنچنے اوراستعمال کے لیے دوبارہ ترقی

علم اور حکمت روح کے تحفے ہیں جو موثر خِدمت کے لیے ضروری ہیں۔ تاہم، ایک تیسرا عنصر ہے جس پر ہمیں توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ یرمیاہ کا تجربہ اس بات کو واضح کرتا ہے۔ کُمہار اور مٹی کا تجربہ کردار کی نشوونما پر مرکوز ہے۔

موسیٰ کی زندگی اس حقیقت کی ایک مثال ہے۔ وہ ایک سو بیس سال تک زندہ رہا، صفائی کے ساتھ تین حصوں میں تقسیم کیا گیا، ہر چالیس سال۔ انہوں نے اپنی زندگی کے ابتدائی چالیس سال مصر میں گزارے جہاں انہوں نے کلام پاک کے مطابق تعلیم و تربیت حاصل کی۔

اس نے اگلے 40 سال مدین کے صحرا میں ایک پرہیزگار کے طور پر گزارے۔ اس دوران اس نے چرواہے کا کام بھی کیا۔ ان کی زندگی کے اس دور کا ایک اہم ، ان کی شخصیت کی تشکیل اور نشوونما تھا۔

اس مدت کے اختتام پر، موسی کو زمین پر سب سے زیادہ حلیم آدمی کے طور پر جانا جاتا تھا۔ روحانی خدمت کے لیے نہ صرف تربیت بلکہ کردار کی بھی ضرورت ہوتی ہے۔ بعض اوقات پادریوں اور ایمانداروں کے لیے اِس پہلو کو سمجھنا مشکل ہوتا ہے۔

آپ اسے اس وقت تک نہیں سمجھ سکتے جب تک آپ اس کا تجربہ نہ کریں۔ آپ خدمت میں اس کے اثرات اور اہمیت کو کبھی نہیں سمجھ پائیں گے جب تک کہ آپ حقیقت میں اس کی تخلیق کے عمل کو نہ دیکھیں۔

عزت کے برتن میں ڈھالا گیا۔

خدا نے یرمیاہ سے کہا کہ وہ سیکھے کہ تخلیق کا عمل کیسے کام کرتا ہے۔ وہ اسے کُمہار کے گھر لے جاتا ہے اور اسے یہ سیکھنے کو کہتا ہےکہ جانے کہ خدا ان زندگیوں کے ساتھ کیا کرتا ہے جن کو وہ استعمال کرنا چاہتا ہے؟

یرمیاہ 1:18 -4 میں، یرمیاہ ہمیں اس خاص تجربے کے بارے میں بتاتا ہے۔ کمہار پہیے پر کام کر رہا تھا کہ برتن بنانے کی کوشش کر رہا تھا۔ "رب نے یرمیاہ کو ایک اور پیغام دیا۔ اُس نے کہا، ’’نیچے کمہار کے گھر جاؤ، میں وہاں تم سے بات کروں گا۔‘‘ اس لیے میں نے ویسا ہی کیا جیسا اُس نے مجھے بتایا اور کمہار کو اپنے پہیے پر کام کرتے پایا۔ تاہم، وہ جو برتن بنا رہا تھا وہ اس کی امید کے مطابق نہیں نکلا، اس لیے اس نے اسے دوبارہ مٹی کے ڈھیر میں کچل دیا اور دوبارہ بنانا شروع کر دیا۔

جس برتن پر کمہار کام کر رہا تھا اس میں ایک بڑی خرابی تھی۔ اسے کچل کر ری فیشن کرنا پڑا۔ یہ ہماری زندگیوں سے بہت ملتا جلتا ہے۔ ہم کئی طریقوں سے پریشان ہیں – بنیادی طور پر کردار کی خامیاں۔ ہمیں مالک کی نظروں میں نئے سرے سے سجنے کی ضرورت ہوگی۔ ہماری زندگی کے برتن خراب ہونے کی کئی وجوہات ہیں۔ خدا کے ہر بچے کو اس حقیقت کو تسلیم کرنا چاہیے۔ ایک ہی وقت میں، کسی کو خود کو کمہار کے ہاتھ میں دینے کے لیے تیار ہونا چاہیے۔

یقیناً یہ عمل تکلیف دہ ہو سکتا ہے اور ہم اس سے گزرنا نہیں چاہتے۔ لیکن خدا نے وعدہ کیا ہے کہ وہ آخرت تک ہمارے ساتھ رہے گا۔ اپنی بھلائی کے لیے، ہم حکمرانی کی تربیت پاتے ہوئے عزت کے برتن بن جاتے ہیں۔

Paul Mursalin is a member of the International Board of Barnabas Aid from Guyana.