سچا  عقیدہ
Photo by Adam Khasbulatov

کُلسیوں 2:16-19 ’’ کوئی شخص خاکساری اور فرشتوں کی عبادت پسند کر کے تُمہیں دوڑ کے اِنعام سے محروم نہ رکھے۔ ایسا شخص اپنی جِسمانی عقل پر بے فائدہ پھُول کر دیکھی ہوُئی چیزوں میں مصرُوف رہتا ہے۔ ‘‘ (آیت 18)

سکول و کالج اور یونیورسٹی کے اساتذہ ، خاص طور پر اگر وہ مسیح میں جڑے ہوئے ہیں، اکثر رحمدلی سے سکھاتے ہیں اور اپنی حکمت کا اشتراک کرتے ہیں۔

وہ ان لوگوں کی سمجھ کو قبول کرکے عاجزی کا مظاہرہ کرتے ہیں جو ان سے سیکھتے ہیں اور جوانی میں اپنے تکبر کو ڈھال کے طور پر استعمال کرسکتے ہیں۔

لیکن کسی کو بھی حقیقی حکمت کی ضرورت نہیں ہے۔ پولوس ان لوگوں کی غلط فہمی کی نشاندہی کرتا ہے جو بے کار خیالات سے بھرے ہوئے ہیں جو لوگ خُدا ئے ثالوث سے الگ ہو جاتے ہیں وہ جھوٹی تعلیمات سے منسلک ہوتے ہیں۔ (آیت 18)

وہ کلسیوں کو ان لوگوں کا شکار بننے سے روکنا چاہتا ہے جو اپنے عقیدے میں نامناسب رسومات اور قواعد شامل کرنا چاہتے ہیں۔

ہمیں یقین نہیں ہے کہ انبیاء نے کیا تعلیم دی، لیکن بہت سے علماء کا خیال ہے کہ کُلسے کے باشندے کافر، یہودی اور مسیحی عقائد سے آمیزش کے لئےمتاثر تھے۔

پولوس چاہتا ہے کہ وہ مسیح کی حکمت اور کفایت کی طرف لوٹ آئیں کیونکہ وہ ان سے خالی تہواروں یا قواعد میں حصہ لینے کا مطالبہ نہیں کرتا ہے۔

کیا ہم عقائد کے جدید امتزاج کا شکار ہو گئے ہیں، شاید اس کے بارے میں سوچے بغیر؟ ہم کہاں ہیں، اپنے ساتھی ایمانداروں کے برعکس، اپنے عقائد کی درستگی میں جھوٹے فخر سے بھرے ہوئے؟

ہم سب پر اندھے دھبے ہیں اور یہ وہ جگہ ہے جہاں ہمیں مسیح میں اپنی بہنوں اور بھائیوں کی ضرورت ہے کہ وہ نرمی سے لیکن مضبوطی سے ہمیں دکھائیں کہ ہم کیا کھو رہے ہیں۔ ہم علم اور حکمت میں بڑھنے کے ساتھ ساتھ حقیقی عاجزی سے بھر جائیں۔


دُعا سے بنانے کا آیکون

: دعا اے باپ، آپ مصنف اور خالق ہیں؛ ہم آپ میں حقیقی معنی اور حکمت پاتے ہیں۔ میری رہنمائی کریں اور مجھے دکھائیں کہ مجھے آپ کی وضاحت اور مدد کی کہاں ضرورت ہے۔ آمین۔

:عملی اقدام اگر آپ کسی چھوٹے گروپ کا حصہ نہیں ہیں جو خدا کے کلام کا مطالعہ کرنے اور ایک دوسرے کی حوصلہ افزائی کرنے کے لیے اکٹھے ہوتے ہیں، تو اس میں شامل ہونے پر غور کریں۔

:غور کرنے کے لئے کتابیں امثال: 22: 4-3 ; میکاہ 6: 8-6 ; یعقوب 4: 10-8 ; 1. پطرس 5: 5-1

Micha Jazz is Director of Resources at Waverley Abbey, UK.