خواہشات

بجانب ناتی127

پیدائش3 :4-7 "عورت نےجو دیکھا کہ وہ درخت کھانے کے لیے اچھا اور آنکھوں کو خُوش نُما معلوُم ہو تا ہےاور عقل بخشنے کے لیے خُوب ہے تو اُس کے پھل میں سے لیا اور کھا یا۔” (آیت 6)

اس دھوکے میں کہ خدا کچھ چھپا رہا ہے، حوا نے اب سمجھ لیا کہ یہ پھل حکمت حاصل کرنے کے لیے ضروری ہے، اس لیے اس نے اسے کھایا اور کچھ آدم کو دیا۔

یہ بظاہر "معصوم فعل” پہلے جوڑے کے لیے تباہی کا باعث بنتا ہے۔ اب ہم اس بات کا یقین کر سکتے ہیں کہ خدا نے آدم اور حوا کو اپنے ساتھ تعلق رکھنے کے لیے بنایا تھا: ان میں کوئی نقص نہیں تھا جس کا مطلب یہ تھا کہ ان میں کمی تھی اور اس لیے انہیں کسی بیرونی کارکن کی ضرورت تھی۔

لیکن اس وقت ان کی بے گناہی واضح طور پر خُدا کے ساتھ رفاقت میں زندگی کا انتخاب کرنے کی ذمہ داری پر عائد ہوتی ہے۔

انہیں بڑی آزادی تھی کہ وہ جو چاہیں کھا لیں۔ اس پابندی کو آسانی سے نافذ کیا جا سکتا تھا۔

یہ سی ایس لیوس تھا جس نے نشاندہی کی کہ ہماری خواہشات بہت کمزور ہیں۔ جب ہمیں خدا کے ساتھ لامحدود خوشی کی پیشکش کی جاتی ہے تو ہم چھوٹی چھوٹی چیزوں کو حل کرتے ہیں۔

لیکن خواہش حوا اور عام طور پر ہماری دنیا کے لوگوں کے لیے ایک مسئلہ ہے۔ بہت سی ثقافتوں میں، جیسے کہ مغرب، ہمیں کہا جاتا ہے: "اپنی خواہشات کو پورا کرو جب تک کہ تم کسی اور کو نقصان نہ پہنچاؤ۔” یہ اصل گناہ کے سوال کی جڑ ہے۔

بلاشبہ، جہاں لوگ خدا کو نہیں جانتے اور اس کی پیروی نہیں کرتے، ہمیں اس وقت حیرت نہیں ہوگی جب وہ زندگی کو ہر ممکن طریقے سے بہترین بنانے کی کوشش کرتے ہیں، اکثر زندگیوں میں کچھ ایسی لذت تلاش کرتے ہیں جو بہت سنگین نظر آتی ہے۔

لہذا، ضرور ہے کہ ہم ایسے رویے سے بچیں جو دوسروں کو قابلِ مذمت سمجھتا ہے۔

لیکن جب ہم اُس کی حمد گاتے ہیں، اس کے کلام سے پرورش پاتے ہیں، اُس کے لوگوں کے ساتھ رفاقت میں رہتے ہیں، اور روزمرہ کی پیداواری سرگرمیوں میں یا خیراتی سرگرمیوں میں دوسروں کے لیے ایک مثال قائم کرتے ہیں، تب ہم برکت کا باعث بن رہے ہوتے ہیں، ہم خُدا کی مرضی کو مرکز میں رکھتے ہیں۔ . خواہش ایک اچھی چیز ہے، بس اس بات کو یقینی بنائیں کہ یہ صحیح سمت میں ہے۔


دُعا سے بنانے کا آیکون

: دُعا

 اَے خُدا  آپ کا شکرہو، آ پ  کے لئےاُس  خواہش  کے لئےجو آپ میرے دِل میں ڈالتے ہیں ۔ مجھے اپنی محبت کا نظارہ دیجئے اور مجھے اپنے ساتھ ایک گہری یگانگت میں لے لیجئے ۔ آمین۔

:عملی اقدام 

اس بارے میں سوچیں کہ آپ واقعی کیا چاہتے ہیں۔ ایماندار ی سے سوچئے .  خُدا سے دُعا کریں کہ وہ      اپنی    ذات کے لئے آپکی بھُوک بڑھائے۔

:غور کرنے کے لئے کتابیں

زبور 145: 21-1 اور زبور 103: 19-1; کُلسیوں 2: 3-1; عبرانیوں 12: 24-18

Micha Jazz is Director of Resources at Waverley Abbey, UK.